مفتی عبدالقیوم خان ہزاروی

منہاج انسائیکلوپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش
Mufti-abdul-qayyum.jpg

مفتی عبدالقیوم خان ہزاروی (1944ء تا حال) اعتدال پسند سنی مسلم عالم دین اور مفتی ہیں، جو 1989ء سے تحریک منہاج القرآن سے وابستہ ہیں۔ آجکل منہاج یونیورسٹی کے کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سائنسز میں بطور پروفیسر تدریسی خدمات کے ساتھ ساتھ صدر دارالافتاءکی ذمہ داری بھی نبھا رہے ہیں۔

ولادت[ترمیم]

1944ء کو ضلع مانسہرہ کے گاؤں پوٹھ میں پیدا ہوئے۔ آپ کے والد سعداللہ خان نے آپ کا نام عبدالقیوم خان رکھا۔ آپ چار بھائیوں میں سب سے چھوٹے ہیں۔

تعلیم[ترمیم]

ابتدئی تعلیم[ترمیم]

تعلیم کا آغاز گاؤں میں مولانا فرید رحمٰن سے قرآن پاک پڑھنے سے کیا۔ 1953ء میں گورنمنٹ پرائمری سکول اوگرہ سے پانچویں پاس کی۔ 1957ء میں گورنمنٹ ہائی سکول مانسہرہ سے ساتویں جماعت کا امتحان پاس کیا۔

ثانوی تعلیم[ترمیم]

1960ء میں میٹرک لاہور بورڈ سے نمایاں نمبروں کے ساتھ پاس کیا۔ لاہور بورڈ سے ہی منشی فاضل اور مولوی فاضل کے امتحانات میں کامیابی حاصل کی۔

درس نظامی[ترمیم]

1965ء میں جامعہ نعمانیہ سے درس نظامی کی سندِ فراغت حاصل کی۔

اساتذہ کرام[ترمیم]

آپ کے اساتذہ میں مولانا گوہر علی، مولانا فرید الرحمٰن، صوفی امیر عبداللہ، شیخ الحدیث علامہ غلام رسول سعیدی، مولانا نور الاسلام اور مولانا حسن ہاشمی جیسی نادرِ روزگار عبقری شخصیات شامل ہیں۔

ازدواج[ترمیم]

پہلی شادی 16 اکتوبر 1965ء کو ہوئی، جس میں سے دو بیتے (طاہر قیوم اور ناصر قیوم) اور دو بیٹیاں پیدا ہوئیں۔ 1975ء میں دوسری شادی کی جس سے ایک بیٹا (امجد قیوم) اور ایک بیٹی پیدا ہوئی۔

تدریس و فتاویٰ نویسی[ترمیم]

متعدد جامعات اور مدارس میں تدریس کے فرائض انجام دیئے۔ 1965ء میں درس نظامی کی تکمیل کے بعد جامعہ نعیمیہ سے تدریس اور افتاء کا آغاز کیا، بعد ازاں جامعہ صدیقیہ سراج العلوم، دارالعلوم حزب الاحناف، جامعہ جماعتیہ میں مختلف اوقات میں کلی یا جزوی طور پر تدریس و افتاء کی ذمہ داریاں ادا کیں۔ اگست 1989ء میں جامعہ اسلامیہ منہاج القرآن میں منتقل ہوئے اور تاحال تدریس اور صدر دارالافتاء کی ذمہ داریاں ادا کر رہے ہیں۔ ’’دی فتویٰ‘‘ ویب سائٹ پر آن لائن پوچھے جانے والے سوالات کے جوابات بھی دیتے ہیں۔

تلامذہ[ترمیم]

کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سائنسز کے اکثر اساتذہ سمیت بیرون ممالک منہاج القرآن اسلامک سینٹرز پر خدمات دینے والے اکثر سکالرز آپ کے شاگرد ہیں۔ نصف صدی تک درس و تدریس کے بعد آپ کا حلقہ تلامذہ کافی وسیع ہے۔

بیعت[ترمیم]

سلسلہ قادریہ میں قدوۃ الاولیاء پیر سید طاہر علاؤالدین القادری کے دست پر بیعت ہیں۔

تصانیف[ترمیم]

آپ کی مستقل تصانیف میں پانچ جلدوں پر مشتمل منہاج الفتاویٰ، میلادالنبی اکابرین کی نظر میں، سعادت الدارین فی الصلوٰۃ علیٰ سیدالکونین شامل ہیں، جبکہ ماہنامہ منہاج القرآن میں آپ کے مضامین باقاعدگی سے شائع ہوتے ہیں۔